دلیپ کمار کے اثاثوں کی کل مالیت کتنی تھی؟‎

ممبئی ، اسلام آباد(این این آئی)بالی ووڈ کے لیجنڈری اداکار یوسف خان المعروف دلیپ کمار کے اثاثوں کی تفصیلات سامنے آئی ہیں جس کے مطابق کْل مالیت 85 ملین ڈالر ہے۔ رقم کو اگر بھارتی روپے میں تبدیل کیا جائے تو یہ رقم 6 ارب 34 کروڑ روپے سے زائد کی بنتی ہے۔دلیپ کی آمدنی کا بڑا ذریعہ اداکاری رہا ہے، دلیپ کمار بالی ووڈ کے وہ پہلے اداکار ہیں

جنہوں نے 50 کی دہائی میں اپنا معاوضہ 10 ہزار روپے سے زائد لیا۔دولت سے مالا مال ہونے کے باوجود دلیپ کمار اور اہلیہ سائرہ بانو انتہائی سادگی پسند تھے اور انتہائی سادہ طرزِ زندگی اپنایا ہوا تھا۔بالی ووڈ لیجنڈ دلیپ کمار کے والد غلام سرور خان پشاور میں پھلوں کا کاروبار کرتے تھے ۔تقسیم ہند سے قبل حالیہ پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں یوسف خان کے نام سے جنم لینے والے لیجنڈری بولی وڈ اداکار دلیپ کمار 98 برس کی عمر میں 7 جولائی کو مداحوں سے ہمیشہ ہمیشہ کیلئے بچھڑ گئے۔ٹھیک اٹھانوے سال پہلے پشاور کے بڑے خاندان میں ایک خوبرو لاڈلا پیدا ہوا اور اس کا نام یوسف خان رکھا گیا۔ غلام سرور خان جو پھلوں کا کاروبار کرتے تھے، 12 بچوں کے باپ تھے جن میں یوسف کا نمبر چوتھا تھا،جب یوسف صرف چھ سال کے تھے تو ان کے والد پورے خاندان کو لے کر ممبئی منتقل ہو گئے، تب تک بر صغیر کا بٹوارہ نہیں ہوا تھا۔پشاور سے ممبئی منتقلی کے بعد یوسف نے وہاں اسکول اور کالج میں

تعلیم پائی، جنگ کے دنوں میں والد کا کاروبار نقصان میں جانے کے باعث انہوں نے ایک دو جگہ نوکریاں بھی کیں تاہم قسمت کو شاید کچھ اور ہی منظور تھا۔ایک روز اچانک ان کی ملاقات اس زمانے کی مشہور اداکارہ اور بمبئی ٹاکیز کی دیویکا رانی سے ہوئی جنہوں نے یوسف کو اداکار بننے کی پیشکش کرتے ہوئے 500 روپے کی بیش قیمت تنخواہ کے ساتھ

ساتھ سالانہ 200 روپے اضافے کی بھی یقین دہانی کرائی۔دیویکا کے خیال میں ایک رومانوی ہیرو پر یوسف خان کا نام نہیں جچتا لہٰذا انہوں نے یوسف کو تین نام جہانگیر، واسو دیو اور دلیپ کمار تجویز کیے جن میں سے یوسف نے آخری نام کا انتخاب کیا۔یوسف کے خیال میں یہ نام اس لحاظ سے بھی بہترین تھا کیوں کہ اس طریقے سے ان کے قدامت پسند والد

کے سامنے ان کی اصلیت بھی آشکار نہیں ہو سکی تھی جو سینما سے وابستہ ہر شخص کو نوٹنکی والا کہتے تھے۔ایک اتفاقی ملاقات نے یوسف کی زندگی بدل دی تاہم اس ملاقات کے ساتھ ہی فلم کی دنیا میں اداکاری کا انداز بھی بدل گیا۔یوسف خان نے تھیٹر کے انداز سے اداکاری کرنے کے بجائے عام زندگی میں بات چیت کے لیے اپنائے جانے والے انداز

کو ترجیح دی، جس کے بعد دوسرے اداکاروں نے ان کی نقل شروع کر دی۔یوسف نے 1944 سے 1997 کے درمیان 53 سال میں فقط 63 فلموں میں کام کیا لیکن اس دوران وہ جو کردار بھی کرتے، اس میں خود کو ڈھال لیتے جیسے کہ انہیں فلم کوہ نور کے ایک منظر میں ستار بجانا تھا تو انہوں نے اپنے کردار میں حقیقت کا رنگ بھرنے کیلیے خصوصی طور پر ایک

ستار کے استاد سے تربیت لی،اس طرح جب فلم نیا دور میں انہیں ٹانگے ڈرائیور کا کردار ملا تو انہوں نے اس کام سے وابستہ لوگوں کی زندگی اور ان کے کام کے انداز کو جاننے کیلئے خاص طور پر اس پیشے سے وابستہ لوگوں کے ساتھ کچھ وقت گزارا۔دیو آنند اور راج کپور کو کبھی کبھی دلیپ جی کا ہم عصر اداکار کہا جاتا ہے تاہم اس حقیقت سے کوئی انکار نہیں

کر سکتا کہ ان جیسا ورسٹائل اور ہرفن مولا کوئی نہ تھا۔راج کپور عام طور پر چارلی چپلن کے انداز کے کردار کیا کرتے جبکہ دیو آنند بوڑھے ہونے کے باوجود بھی جوانی کے سحر سے باہر نہیں نکل پائے اور اسی طرح کے کردار ادا کرتے رہے۔دلیپ کمار نے پہلے گنگا جمنا میں جو ان کی پروڈیوس کردہ واحد مووی بھی ہے میں ایک عوامی کردار ادا کیا

تو دوسری جانب اس سے کہیں زیادہ آسانی سے برصغیر کے اس عظیم اداکار نے فلم مغل اعظم میں شہزادہ سلیم کا لازوال کردار ادا کیا جہاں ایک کنیز کے پیار میں پاگل سلیم شہنشاہ وقت سے ٹکرا جاتا ہے، اس فلم میں مدھو بالا نے بھی شاندار اداکاری کے جوہر دکھائے تھے۔رومانوی کردار ہو یا کامیڈی، دلیپ کمار نے جس کردار کو بھی اپنایا اسے امر کر دیا،

ہندوستانی حکومت نے شاندار اور بے مثال اداکاری کا اعتراف کرتے ہوئے انہیں 1995 میں ہندوستان کے سب سے بڑے فلمی ایوارڈ ’’دادا صاحب پھالکے ایوارڈ‘‘سے نوازا جبکہ حکومت پاکستان نے بھی انہیں سب سے بڑے سول اعزاز سے نوازا تھا، وہ مرار جی دیسائی کے بعد یہ اعزاز حاصل کرنے والے دوسرے ہندوستانی ہیں۔بہت کم لوگ یہ بات جانتے ہیں

کہ دلیپ کمار نے پاکستانی سرزمین پر پہلی دفعہ 60 کی دہائی میں اس وقت قدم رکھا تھا جب لندن جاتے ہوئے فنی خرابی کے باعث ان کے طیارے کو کراچی میں رکنا پڑا تھا، اس موقع پر انہیں وی آئی پی لاؤنج میں ٹھہرایا گیا۔چیف پروٹوکول افسر نواب راحت صاحب چٹھرانی وہاں اکیلے ہی بیٹھے رہ گئے اور نواب صاحب کی بیٹی سمیت ایئرپورٹ پر موجود ان کے تمام مداحوں نے انہیں گھیر لیا تھا۔اس موقع پر سینیئرز کی اجازت کے بغیر لاؤنج کھولنے پر دو اسٹاف ممبرز کو معطل بھی کردیا گیا تاہم بعدازاں انہیں بحال کر دیا گیا تھا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *