وزیر اعظم کی اپوزیشن کو انتخابات پر مذاکرات کی دعوت

اسلام آبا د(این این آئی) وزیر اعظم عمران خان نے اپوزیشن کو انتخابات پر مذاکرات کی دعوت دیتے ہوئے کہاہے کہ انتخابی اصلاحات حکومت یااپوزیشن کی نہیں، جمہوریت کے مستقبل کی بات ہے،اپوزیشن کے پاس کوئی تجاویز ہیں تو سننے کیلئے تیار ہیں، مسئلہ حل ای وی ایم مشین ہے،ای وی ایم مشین ہوتو پولنگ ختم ہونے پر سب رزلٹ آجاتا ہے، اگر ہم اصلاحات نہیں کریں گے تو ہر الیکشن میں یہی سلسلہ ہوگا۔

بدھ کو یہاں قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہاکہ سب سے پہلے اپنی پارلیمانی پارٹی اور اتحادیوں بجٹ میں بھرپور طریقے سے شرکت کر نے پر شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔وزیراعظم انتخابی اصلاحات پر اپوزیشن کو مذاکرات کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ ملک میں 1970کے بعد تمام انتخابات متنازع رہے۔ وزیر اعظم نے کہاکہ حالیہ ضمنی انتخابات اور سینٹ انتخابات میں بھی تنازع کا شکار رہے۔وزیراعظم نے کہا کہ گزشتہ 2 برس میں ہم نے بہت کوشش کی کہ اس ضمن میں کیا اصلاحات کی جاسکتی ہیں کہ جو بھی الیکشن ہارے اس نتیجے کو قبول کرے، ہم نے اس سلسلے میں تجاویز بھی دی ہیں لیکن ابھی تک ان پر اپوزیشن کی بحث نہیں ہوئی۔انہوں نے کہا کہ میں درخواست کروں گا کہ یہ حکومت و اپوزیشن کی بات نہیں ہے یہ پاکستان کی جمہوریت کا مستقبل ہے۔ عمران خان نے کہا کہ اپنی زندگی کے 21 سال میں بین الاقوامی کرکٹ کھیل کر گزارے تو میں اپنا تجربہ بتانا چاہتا ہوں کہ جب ہم کرکٹ کھیلتے تھے تو ملک اپنے اپنے امپائر کھڑے کرتے تھے اور جو ہارتا تھا وہ کہتا تھا کہ امپائروں نے ہمیں ہرادیا لیکن پاکستان وہ ملک تھا جس نے نیوٹرل امپائر کھڑے کیے تھے اور اب یہ مسئلہ ختم ہوگیا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ اب یہ وقت آگیا ہے کہ ہم الیکشن لڑیں اور کسی کو یہ فکر نا ہو کہ دھاندلی سے ہرادیا جائے گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ پہلے دن جب میں قومی اسمبلی میں تقریر کرنے کھڑا ہوا تھا تو اپوزیشن نے تقریر نہیں کرنے دی تھی اور انہوں نے کہا تھا کہ الیکشن ٹھیک نہیں ہوئے، اگر الیکشن ٹھیک نہیں ہوئے تے تو انہیں بتانا چاہیے تھا کہ کیسے ٹھیک نہیں ہوئے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جب سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ الیکشن ٹھیک نہیں ہوئے تو ان کے میڈیا اور عوام نے کہا کہ اس بات کا ثبوت دیں۔

انہوں نے کہا کہ جب 2013 میں ہم نے کہا تھا کہ الیکشن درست نہیں ہوئے تو 133 میں سے 4 حلقوں کا مطالبہ کیا تھا کہ ان کا آڈٹ کیا جائے لیکن ان 4 حلقوں کو نہیں کھولا گیا تھا جس کے بعد 2 سے ڈھائی سال بعد کیس لڑکر ہم نے وہ حلقے کھلوائے۔ وزیر اعظم نے کہاکہ 2013 کے الیکشن پر جوڈیشل کمیشن کی سفارشات ہیں۔عمران خان نے کہا کہ میں اپوزیشن سے کہنا چاہتا ہوں کہ اس مسئلے کا صرف ایک ہی حل ہے

پروٹو ٹائپ الیکٹرانک ووٹنگ مشین(ای وی ایم) کیونکہ جب ووٹنگ ختم ہوتی ہے تو بٹن دباتے ہی نتائج فوراً سامنے آجاتے ہیں، اس طرح ڈبل اسٹامپس، تھیلیاں کھلے ہونے کے مسائل ختم ہوتے ہیں اور جو بھی اعتراض کرنا چاہے وہ اٹھاسکتا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ اگر اپوزیشن کے پاس کوئی اور تجویز ہے تو ہم وہ سننے کیلئے تیار ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اگر اصلاحات نہیں کرینگے تو پھر ہر الیکشن میں یہی سلسلہ ہوگا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.