سخت شرائط ماننے سے انکار ، آئی ایم ایف سے پاکستان کو اگلی قسط کا حصول تاخیر کا شکار ہوگیا

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )وزیرخزانہ شوکت ترین نے پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان چھٹے اقتصادی جائزہ مذاکرات بغیر نتیجہ ملتوی ہونے کی تصدیق کردی اور کہا آئی ایم ایف سے اگلی قسط کا حصول بھی تاخیر کا شکار ہوسکتا ہے۔تفصیلات کے مطابق پاکستان اور آئی ایم ایف کے

درمیان چھٹےاقتصادی جائزہ مذاکرات بغیرنتیجہ ملتوی ہوگئے ، وزیرخزانہ نے تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ غریبوں پربوجھ نہیں ڈال سکتے، آئی ایم ایف کے ساتھ مذاکرات کا سلسلہ جاری رہے گا۔نجی ٹی وی اے آروائی کے مطابق شوکت ترین کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف پاکستانی معیشت کا ستمبر میں پھر جائزہ لے گا اور اگلے2سے 3ماہ کی کارکردگی مانیٹرکرے گا، جس کے باعث آئی ایم ایف سے اگلی قسط کا حصول بھی تاخیر کا شکار ہوسکتا ہے۔یاد رہے وزیر خزانہ شوکت ترین نے پری بجٹ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا تھا کہ آئی ایم ایف سے شرائط پر دوبارہ مذاکرات کررہے ہیں، آئی ایم ایف بجلی کے نرخ اورٹیکسزبڑھانا چاہتا ہے، ہم بجلی کے نرخ اور ٹیکسز نہیں بڑھا رہے۔وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف کو واضح طورپرکہہ دیا ٹیکس،ٹیرف نہیں بڑھاسکتے، ہم غریب اور تنخواہ دارطبقے پرمزید بوجھ نہیں ڈالیں گے، بعض شعبوں میں اقدامات کردیے ہیں۔شوکت ترین نے کہا تھا آئی ایم ایف کوگروتھ کیلئےمتبادل پلان کابتادیاگیاہے، آئی ایم ایف کی شرط ٹیکس بڑھانے کی بجائے دوسرے طریقے سے پوری کریں گے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.