جب تک عمران خان کی زندگی ہے وہ وزیراعظم رہیں گے

اسلام آباد(مانیٹرنگ +این این آئی) خاتون رہنما تحریک انصاف عالیہ حمزہ ملک نے نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم یہ مدت بھی پوری کریں گے، اگلی حکومت بھی ہماری ہو گی بلکہ عمران خان کی جب تک زندگی ہے وہ تاحیات وزیراعظم رہیں گے، دوسری جانب عالیہ حمزہ ملک نے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے سیفران

میں بات کرتے ہوئے کہاکہ یہ مسئلہ کامرس کے حوالے سے اگلے اجلاس میں ان کو بلایا جائے۔ایران نے باڈر مارکیٹ بنانے سے منع کردیا ہے کہ نہ بنائی جائے۔ افغانستان کے ساتھ باڈر مارکیٹ پر کام ہورہاہے۔ایران پر عالمی پابندیاں ہیں جس کی وجہ سے حکومت ان کے ساتھ براہ راست تجارت نہیں کرسکتی ہے۔ دونوں طرف کے چیمبر آف کامرس تجارت میں حصہ لیں گے۔ایران کے ساتھ سمگلنگ کا بہت بڑا مسئلہ ہے۔وزارت پیٹرولیم کے حکام کمیٹی کوبتایاکہ سابقہ فاٹا میں گیس کی سپلائی کے لیے 28ارب روپے درکار ہیں اگر صوبہ کے پی کے کی طرف سے فنڈز مل جائیں تو اس پر کام شروع کردیں گے۔دریں اثناء وزیراعظم عمران خان خان اقتصادی تعاون تنظیم (ای سی او) کی پارلیمانی اسمبلی میں مشترکہ چارٹرکی منظور پر مبارک باد دیتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا میں ممالک نہیں خطے ترقی کرتے ہیں، خطے کے مسائل حل کرلیں تو ہم پاور ہاؤس بن جائیں گے، جب کمیٹیاں زیادہ فعال ہوں گی، آپس میں رابطے بڑھیں گے تو انشااللہ ہمارے ملک بھی قریب آجائیں گے،فلسطینی اور کشمیری یو این قراردادوں پر عمل نہ ہونے سے تکلیف میں ہیں، افغانستان میں انتشار ہوگا تو ہمارا خطہ مشکلات کا شکار ہوگا، افغانستان میں حالات بہتر ہوں گے تو خطے کو بھی اس کا فائدہ ہوگا، ہم سب کوکوشش کرنی چاہیے افغانستان سے غیرملکی فوج

کاانخلاپرامن ہو، اس سے اقتصادی تعاون بڑھانے اور تجارت سے خطے میں ترقی ہوگی۔بدھ کو اسلام آباد میں اقتصادی تعاون تنظیم (ای سی او) کی پارلیمانی اسمبلی کے اختتامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ رکن ممالک کے تمام نمائندوں اور پاکستان آئے ہوئے پارلیمنٹرینز کو خوش آمدید کہتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ مجھے خوشی ہوئی کہ اسلام آباد چارٹر پر دستخط کرکے منظور کیا، جس پر میں سب کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں کیونکہ اس میں آپ نے چند اہم باتیں کی ہیں۔انہوں نے کہاکہ سب سے پہلے آپ نے کمیٹیاں بنائیں جو ان 10 ممالک کے درمیان رابطہ کاری کو مزید بڑھائیں گی، دنیا میں ملک نہیں خطے ترقی کرتے ہیں اور

یہ اتنا بڑا خطہ ہے کہ میرے خیال میں ترکی کے اسپیکر نے کہا کہ ہماری مجموعی آبادی 45 کروڑ ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ 45 کروڑ کی آبادی ایک بہت بڑی ہیومینٹی کا نام ہے اور اس میں پوٹینشل ہے، اگر ہم اتنی تعداد کو صحیح معنوں میں منسلک کریں اور تجارت بڑھا لیں اوراپنے مسئلے حل کرلیں تو یہ پورا پاور ہاؤس بن جاتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *