پاکستان ریلوے نے تمام مسافر ٹرینوں کی نجکاری کرنے کافیصلہ کرلیا

اسلام آباد (این این آئی)پاکستان ریلوے نے تمام مسافر ٹرینوںکی نجکاری کرنے کافیصلہ کرلیا،مسافرٹرینیںآئوٹ سورس کرنے سے کرائے بڑھ جائیں گے تمام بوجھ مسافروں پر پڑے گا،تیسرے مرحلے میں 64منافع بخش ٹرنیوں کی نجکاری کی جائے گی،تمام مسافر ٹرنیوں کی نجکاری کے لیے ریلوے بورڈ سے بھی منظوری نہیں لی گئی ہے ،صرف خسارے میں چلنے والی گاڑیوں کی

نجکاری کی جائے منافع بخش ٹرنیوں کی نجکاری سے ریلوے کونقصان ہوگا جبکہ ترجمان ریلوے نے کہاکہ ریلوے کی آمدن بڑھانے اور عوام کوسہولت دینے کے لیے ٹرنیوں کی نجکاری کررہے ہیں ۔دستاویزات کے مطابق پاکستان ریلوے نے تما م چلنے والی مسافر ٹرنیوں کوآئوٹ سورس کرنے کافیصلہ کرلیاہے پاکستان ریلوے نے کرونا کی پہلی لہر کے بعد تمام مسافرٹرینیں بندکردی تھیں اور کرونامیں کمی کے بعد 88مسافرٹرینیں دوبارہ شروع کردی تھیں جو کرونا سے 130سے زائد تھیں جس پر پاکستان ریلوے کو کہناتھاکہ باقی ٹرنیں خسارہ میں چل رہی تھیں پہلے مرحلے میں 15مسافر ٹرینیوں آئوٹ سورس کرنے کا فیصلہ کیا تھا جن میں سے 3منافع بخش مسافر ٹرینیں نجی کمپنی چلارہی ہے جبکہ4خسارے میں چلنے والی ٹرینوں کونجی کمپنی نے 3ماہ کے اندر واپس کر دیاجبکہ منافع میں چلنے والی ٹرینوں کواپنے پاس رکھا۔ اس کے بعد دوبارہ 15 ٹرینوں کو آئوٹ سورس کرنے کااشتہار دیاگیاجن میں سے 5ٹرینوں کے آئوٹ سورس کی منظوری دے دی گئی ہے جو ابھی نجی کمپنی کے حوالے نہیں کی گئی ہیں۔تیسرے مرتبہ ریلوے نے تمام منافع میں چلنے والی مسافر ٹرینیں آئوٹ سورس کرنے کا فیصلہ کیا ہے جن میں کامیاب ترین اور منافع میں چلنے والے ٹرینیں بھی شامل ہیں۔جن 32 مسافرٹرینوں کوکہ اپ اینڈ ڈائون کوملاکر64بن جاتی ہیں ان میں وی آئی پی ٹرین گرین لائن ،

خیبرمیل ،تیزگام ،علامہ اقبال ،ہزارہ ایکسپریس،عوام ایکسپریس،کراچی ایکسپریس،ملت ایکسپریس،بہاولدین ذکریہ ایکسپریس،شالیمارایکسپریس،پاک بزنس ایکسپریس،جعفرایکسپریس،قراقرم ایکسپریس،شاہ حسین ایکسپریس،پاکستان ایکسپریس،رحمان بابا ایکسپریس،سبک رفتار ،سیک خرام ،راول ایکسپریس،اسلام آبادایکسپریس،غوری ایکسپریس،موسیٰ ایکسپریس،لاثانی

ایکسپریس،کوہاٹ ایکسپریس،میانوالی ایکسپریس،اٹک پسنجر،جنڈ پسنجر،منجودوڑو،شاہین پسنجر،راولپنڈی پسنجراور چمن پسنجرشامل ہیں۔وزارت ریلوے کے مطابق جو ٹرینیں کرونا کی پہلی لہرکے بعد بحال کی گئی ہیں وہ منافع بخش ٹرینیں ہیں جو خسارے میں چل رہی تھیں ان کوبند کردیاہے اب ریلوے نے منافع میں چلنے والے مسافرٹرینوں کی بھی نجکاری کرنے کافیصلہ کرلیاہے جبکہ ریلوے میں مسافر ٹرینوں کے کمرشل مینجمنٹ دیکھنے کے لیے ہزاروں کی تعدا دمیں ملازمین کام کررہے

ہیںمسافرٹرینوں کی نجکاری سے ان لائن بکنگ کی سہولت ختم ہوگئی ہے اور مزید ٹرینوں کی نجکاری سے یہ سہولت تمام ٹرینوں میں ختم ہوجائے گی۔ماہرین ریلوے کاکہناہے کہ منافع بخش ٹرینوں کوکے کمرشل مینجمنٹ کوآئوٹ سورس کرنے سے ریلو ے کے منافع میں کمی ساکھ کوبھی

نقصان ہوگا۔جوٹرینیں منافع میں چل رہی ہیں ا ن کو آئوٹ سور س کرنا سمجھ سے بالاتر ہے ریلوے کی ساری مسافرٹرنیوں کوآئوٹ سورس کرنے سے پہلے ریلوے بورڈ سے اس کی منظوری لازمی ہوتی ہے مگر وہ بھی نہیں لی گئی ہے منافع بخش مسافر ٹرنیں ریلوے کی پہچان ہیں اگر ا ن کو آئوٹ سورس کیاجائے تو اس سے ریلوے کی ساکھ کوہی نقصان ہوگا جو مسافر ٹرنیں پہلے ہی آئوٹ سورس ہوگئی ہیں انہوں نے بھی ٹکٹ اور پارسل کے کرائے بڑھادیئے ہیں جن کابراہ راست بوجھ ریل مسافروں پر

پڑا ہیجبکہ ریلوے کا نجی کمپنی پر کوئی چیک اینڈ بیلنس نہیں۔ ریلوے کی طرف سے تمام ٹرینوں کوآئوٹ سورس کردیاجائے تو ہزاروں کی تعداد میں ریلوے ملازمین جوکمرشل شعبہ میں کام کررہے ہیں ان کا کیاکیاجائے گاسرکاری ملازم کونوکری سے نہیں نکالاجاسکتاہے ریلوے کوصرف وہی ٹرنیں آئوٹ سورس کرنی چاہیے جو خسارہ میں چل رہی ہیں۔ لانگ روٹ کی تمام مسافر ٹرنیں منافع میں چل رہی ہیںان میں بکنگ نہیں ملتی ہے منافع کی وجہ سے یہ ریلوے کی پہچان ہیں ۔سابقہ دور حکومت میں

بھی منافع بخش ٹر ینوں کوآئوٹ سورس کرنے کی کوشش کی گئی مگر اس وقت ریلوے افسران نے اس کے مخالفت کی جس کی وجہ سے صرف خسارہ میں چلنے والی ٹرینیں آئوٹ سور س کی گئیں۔ترجمان ریلوے نے اس حوالے سے موقف دیتے ہوئے کہاکہ مسافرٹرینوں کی نجکاری سے ریلوے کی آمدن میں اضافہ اور مسافروں کوبہتر سہولت ملے گی جبکہ کمرشل مینجمنٹ آئوٹ سورس ہوجانے سے کمرشل شعبے کے ہزاروں ملازمین کیاکام کریں گے کاانہوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *