جہانگیر ترین کی جعلی بینک اکاونٹس کیس میں ضمانت کی سماعت کرنیوالے جج کا تبادلہ کر دیا گیا

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک/این این آئی )تحریک انصاف کے ناراض رہنما جہانگیر ترین کی جعلی بینک اکاونٹس کیس میں ضمانت کی سماعت کرنیوالے جج کا تبادلہ کردیاگیا۔تفصیلات کے مطابق بینکنگ کورٹ کے جج چودھری امیر محمد خان کو بغیر متبادل سیشن جج حافظ آباد تعینات کر دیا گیا،چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس قاسم خان کی منظوری کے بعد نوٹیفیکیشن جاری کردیاگیا،

نوٹیفیکیشن میں 18 دیگر سیشن ججوں اور لاہور کے 22 سول ججوں کے بھی تبادلے کر دیئے گئے ۔ دوسری جانب بینکنگ کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین اور علی ترین کی عبوری ضمانت میں 31مئی تک توسیع کر دی۔سیشن کورٹ سے ضمانت میں توسیع کے بعد جہانگیر ترین اور ان کے بیٹے علی ترین بینکنگ کورٹ میں پیش ہوئے جہاں ان کے وکیل بیرسٹر سلمان صفدر نے دلائل دیئے۔جہانگیر ترین کے وکیل نے کہاکہ پوری منی ٹریل دینے کو تیار ہیں، تمام ریکارڈ موجود ہے،عید کی تعطیلات میں جتنا ممکن ہوا ریکارڈ اکٹھا کیا،جس ٹرانزیکشن کا حکم دیں پوری تفصیل فراہم کریں گے۔وکلا جہانگیر ترین کاکہنا تھا کہ جہانگیر ترین اور خاندان کا تمام منی ٹریل اور ریکارڈ موجود ہے، ریکارڈ کی جانچ پڑتال کر کے بینک سے تصدیق کرا لیں۔جج نے ایف آئی اے کے ڈپٹی ڈائریکٹر سے دو مرتبہ سوال کیا کہ آپ ملزم کو گرفتار کرنا چاہتے ہیں؟ اس پر تفتیشی افسر خاموش رہے اور کہا کہ ریکارڈ کا جائزہ لے رہے ہیں۔اس موقع پر بینکنگ کورٹ نے بھی جہانگیر ترین اور علی ترین کی ضمانت میں 31مئی تک توسیع کر دی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.