حکومت کا پاور پلانٹ کو گیس سپلائی بند کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد(آن لائن)وفاقی حکومت نے گیس بحران کے باعث پاورپلانٹ کو سپلائی بند کرنے کا فیصلہ کرلیا، پاورپلانٹ کو یکم فروری سے گیس سپلائی مؤخر کردی جائے گی،سپلائی بند کرنے سے 415ایم ایم سی ایف ڈی گیس کی بچت ہوگی۔ ذرائع کے مطابق حکومت نے گیس پر چلنے والے پاورپلانٹ کو یکم فروری سے سپلائی بند

کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔سردیوں میں گھریلو صارفین کو گیس کی سپلائی حکومت کی اولین ترجیح ہے، 976 صنعتی یونٹس کو بھی بندکردیا جائے گا، اسی طرح ایکسپورٹ انڈسٹری کو بھی سپلائی بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ایک ہزار 211 صنعتیں بجلی پیدا کرنے کیلئے گیس استعمال کررہی ہیں۔ ان سیکٹر ز کو گیس بند کرنے سے415 ایم ایم سی ایف ڈی گیس کی بچت ہوگی۔مزید برآں اوگرا نے 12 سال بعد نئے سی این جی لائسنسوں پر سے پابندی ہٹا لی ہے۔جو لوگ نئے لائسنس لے کر آر ایل این جی پر سی این جی اسٹیشنز لگانا چاہتے ہیں وہ اوگرا میں درخواست جمع کراسکتے ہیں۔ای سی سی نے ار ایل این جی کے ذریعے سی این جی سٹیشنز لگانے کی اجازت دے دی ہے تاہم لائسنس حاصل کرنے والے صارفین اس کو بعد میں ملکی گیس میں تبدیل نہیں کرا سکیں گے۔دوسری جانب انڈسٹریز ایسوسی ایشن نے پاور ڈویژن کی طرف سے فروری تک تمام صنعتوں کو گیس کی فراہمی بند کرنے کے فیصلہ پر تشویش کا اظہار کیا۔اس اقدام کو غیردانشمندانہ اورصنعت دشمن اقدام قرار دیتے ہوئے کہا کہ صنعتی شعبہ میں گیس کی بندش سے سینکڑوں صنعتیں بند ہونے سے لاکھوں مزدور بے روزگاری کا شکار ہونگے،گیس کی بندش سے صنعتی شعبہ میں مال کی فراہمی کے قبل از کیے گئے معاہدوں کی عدم تکمیل سے صنعتکار مالی مشکلات کا شکار ہونگے جس سے صنعتی و تجارتی شعبہ متاثر ہوگا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.