ہمارا مقابلہ صرف عمران خان سے نہیں، اسٹیبلشمنٹ سے بھی ہے، ن لیگ کے اجلاس کی اندرونی کہانی

لاہور (آن لائن) مسلم لیگ ن کے رہنما خواجہ سعد رفیق نے پارٹی کی تنظیمی خامیوں پر سوال اٹھا دیا، کہا کہ پارٹی میں سزا اور جزا کا عمل ہونا چاہیے، کچھ لوگوں نے جلسے کے حوالے سے پوری ذمہ داری نہیں نبھائی، مریم نواز نے واضح الفاظ میں کہا کہ پارٹی میں جزا اور سزا کا عمل بھی ہو گا اور جن لوگوں نے ذمہ داری نہیں نبھائی ان سے پوچھا جائے گا ۔تفصیلات کے مطابق

مسلم لیگ نون کی سی ای سی، سی ڈبلیو سی، ایم این اے اور سینیٹرز کے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی، ذرائع کے مطابق خواجہ سعد رفیق نے تنظیمی خامیوں پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ جن لوگوں نے جلسے کے حوالے سے ذمہ داریاں نہیں نبھائیں ان سے سوال ہونا چاہیے۔مریم نواز کا کہنا تھا کہ جن لوگوں نے ذمہ داری نہیں اٹھائی ان سے پوچھا جائے گا، پارٹی میں جزا اور سزا کا عمل بھی ہو گا۔ ذرائع کے مطابق مریم نواز کا کہنا تھا کہ ہمارا مقابلہ صرف عمران خان سے نہیں، اسٹیبلشمنٹ سے بھی ہے، پارٹی کومضبوط کرنا ہے، پی ڈی ایم کے فیصلے کے بعد استعفے کب استعمال کرنے ہیں اس پر آپ کو کسی مشکل میں نہیں ڈالیں گے، مشاورت کریں گے۔ ذرائع کے مطابق مسلم لیگ نون سندھ کے صدر شاہ محمد شاہ کا کہنا تھا کہ مریم صاحبہ آپ کی شکل میں فاطمہ جناح اور بینظیر بھٹو نظر آتی ہیں، جبکہ خواجہ آصف نے کہا کہ مریم صاحبہ جلسہ کامیاب ہونے کا کریڈٹ دوسروں کے ساتھآپ کو جاتا ہے، لاہور کے لوگوں کو جلسے کیلئے آپ نے جس طرح موبلائز کیا تھا وہ قابل تعریف ہے۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ کامیاب جلسہ منعقد کرنے کیلئے مریم نواز نے بہت متحرک کردار ادا کیا۔ذرائع کے مطابق راجہ ظفرالحق، مشاہد حسین سید،مشاہد اللہ خان، جاوید عباسی، کچھ ایم این اے اور سینیٹرز مسلم لیگ نون کے اجلاس میں شریک نہ ہو سکے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.