اگر ایماندار شخص کے آنے سے ٹیکس کولیکشن میں اضافہ ہوتا ہے تو مولانا طارق جمیل کو چیئرمین ایف بی آر لگا دیں،ڈاکٹر اکرام الحق کا وزیراعظم پر طنز

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستانی محقق اور بین الاقوامی ٹیکس کے وکیل اور ماہر امور محصولات ڈاکٹر اکرام الحق کا کہنا ہے کہ اگر ایماندار شخص کے آنے سے ٹیکس کولیکشن میں اضافہ ہوتا ہے تو مولانا طارق جمیل کو چیئرمین ایف بی آر لگا دیں، ڈاکٹر اکرام الحق نے

وزیراعظم عمران خان پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ اگر صرف ایمانداری ہی ٹیکس کی وصولی میں اضافہ کرسکتی ہے تو ہمیں مولانا طارق جمیل سے ایف بی آر کی سربراہی کی درخواست کرنی چاہئے۔انہوں نے انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ قوانین اورٹیکنالوجی کا نفاذ فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے ٹیکس جمع کرنے کے اہداف کو حاصل کرنے کی چابی ہے۔ واضح رہے کہ اکرام الحق نے یہ تبصرہ وزیر اعظم عمران خان کے 2018 کے انتخابات سے قبل اپنی انتخابی مہم کے دوران پختہ یقین کے تناظر میں آیا ہے کہ ایماندار قیادت لوگوں کو ٹیکس ادا کرنے اور ٹیکس سے مطابقت کرنے والی ریاست کا درجہ حاصل کرنے پر اثر انداز ہوسکتی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت نے ایماندارانہ قیادت کے باوجوداقتدار میں دو سال گزرنے کے بعد بھی عوام کو ٹیکس کلچر اپنانے کے لئے اپنی بھرپور جدوجہد کی ہے۔پروگرام کے دوران انکشاف ہوا کہ قومی ٹیکس نمبر رکھنے والے تقریباً6.5 ملین افراد نے ٹیکس گوشوارے جمع کروانے تھے لیکن ان میں سے زیادہ تر 4.7 ملین یا 72 فیصدافراد نے ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کرائے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.