مولانا خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ میں ایک کروڑ 70لاکھ افراد نے شرکت کی نیوزی لینڈ میں شائع رپورٹ میں اعتراف

اسلام آباد،لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک،آن لائن )تحریک لبیک پاکستان کے امیر مولانا خادم حسین رضوی جنہیں گزشتہ روز لاہور میں سپرد خاک کردیا گیا تھا آج داتا دربار میں انکی رسم قل جاری ہے ، اس موقع پر مختلف مقررین ان کی دینی خدمات پر روشنی ڈال رہے ہیں ،

تحریک لبیک پاکستان صوبہ سندھ کے امیراوررکن شوریٰ علامہ غوث بغدادی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مولانا خادم حسین رضوی اللہ کے ایک ولی تھے ۔ زمانہ انہیں پہلے ہی ولی مانتا تھااور کل کے منظر نے تو سب کچھ ہی واضح کردیا، انہوں نے انکشاف کیا کہ نیوزی لینڈ میں ایک رپورٹ جو کہ انگریزی زبان میں پیش کی گئی انہوں نے مختلف میپس(نقشوں )کے ذریعے کورڈ ایریا کو بیان کیااور انہوں نے یہ اندازہ لگایا کہ ایک شخص کتنی جگہ لے لے گاتو جو ان کی رپورٹ تھی وہ یہ تھی کہ نماز جنازہ میں ایک کروڑ 70لاکھ سے زائد افراد نے شرکت کی ۔واضح رہے کہ تحریک لبیک پاکستان کے قائد علامہ خادم حسین رضوی کے جنازے کے حوالے سے لاہور کے شہریوں نے بھی اس جنازے کو لاہور کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ قرار دے دیا ۔ علامہ خادم حسین رضوی مرحوم کے نماز جنازہ نے شہر کے تمام بڑے نماز جنازوں کا ریکارڈ بھی توڑ دیا ہے۔ شہریوں کا کہنا ہے کہ تحریک لبیک پاکستان علامہ خادم حسین رضوی کی

دینی خدمات کے پیش نظر پنجاب کی تیسری بڑی سیاسی جماعت تھی۔ تحریک لبیک کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کے جسد خاکی کے قافلے نے چوک یتیم خانہ سے مینار پاکستان تک کا سفر تقریبا ساڑھے چار گھنٹے میں طے کیا۔ بتایاگیا ہے کہ مرحوم کے جسد خاکی کا

قافلہ ہفتے کی صبح 9 بجے چوک یتیم خانہ کے قریب واقعہ ان کی رہائشی گاہ سے مینار پاکستان کے لئے روانہ ہوا۔ جو براہ راستہ سمن آباد موڑ، چوبرجی اور سول سیکرٹریٹ کے راستے سے گزرتا ہوا تقریبا ً1 بجکر 15منٹ پر آزادی فلائی اوور پر پہنچا قافلے کے ہمراہ جتنے عقیدت

مند موجود تھے اس سے کئی گنا زیادہ علامہ خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ میں شرکت کے لئے گریٹر اقبال پارک کی گرائونڈ میں ہفتے کی صبح ہی سے پہنچ چکے تھے۔ جو نماز جنازہ کے سلسلے میں علامہ خادم حسین رضوی کی جسد خاکی کی آمد کا انتظار کرتے رہے جبکہ

قافلے کے روٹ کی فضا لبیک یا رسول اللہ، لبیک یا رسول اللہ کی صدائوں سے گونجتی رہی۔تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کے جسد خاکی کا قافلہ چوک یتیم خانہ سے جب آزادی فلائی اوور پہنچا تو علامہ خادم حسین رضوی کے جسد خاکی سے ملحقہ ایمبولینس

کو آزادی فلائی اوور پر کچھ دیر کھڑا کئے رکھا جہاں تحریک لبیک کی انتظامی کمیٹی اور ضلعی انتظامیہ کے درمیان مذاکرات بھی ہوئے۔ ضلعی انتظامیہ کا موقف تھا کہ چونکہ گریٹر اقبال پارک مکمل طور پر بھر چکا ہے جس کی وجہ سے علامہ خادم حسین رضوی کا نماز جنازہ آزادی فلائی اوور پر ہی پڑھا دیا جائے۔ مذاکرات کا یہ سلسلہ کچھ دیر تک جاری رہا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *